مہنگائی کی ذمہ دار تحریک انصاف کی حکومت قرار

ہاکستان فلاح پارٹی نے ملک بھر میں ہوشربا مہنگائی کی ذمہ دار تحریک انصاف کی نا اہل حکومت کو قرار دیتے ہوئے واضح کیا ہے کہ اب احتجاج کا سلسلہ اس وقت تک جاری رکھاجائے گا جب تک مہنگائی کو کنٹرول اور عوام کو ریلیف نہیں مل جاتا.
ان خیلات کا اظہار پاکستان فلا ح پارٹی کے مرکزی ناٸب صدر سید آفتاب عظیم بخاری اور محمد نوید بٹ قادری ناٸب صدر پنجاب پی ایف پی رفیق خاں لودھی رانا آصف خاں طارق گجر نے چوک گھنٹہ گھر پر مہنگاٸی بیروز گاری کے خلاف احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ھوۓ کیا اس ضمن میں صارف عدالتوں سے رجوع بھی کیا جائے گا تبدیلی کےدعوے دار نالائق حکمرانوں کا قبلہ درست ہونے تک چین سے نہیں بیٹھا جائےگا وزیر اعظم تقریوں کے بجائے عملی اقدامات پر توجہ دیں ان خیالات کا اظہار راولپنڈی پریس کلب کے سامنے مہنگائی کےخلاف عوامی احتجاج سے مقررین نے خطاب کیا ۔ مظاہرہن نے پلے کارڈز اور بینرز اٹھا رکھے تھے جن پر مہنگائی ۔بجلی گیس اور پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں آئے روز اضافے کے خلاف نعرے درج تھے۔ مقررین نے کہا کہ حکومت اپنے اڑھائی سالوں میں ہر شعبہ میں بری طرح ناکام ہوچکی ہے تبدیلی کے نعرے تنزلی کی صورت اِختیار کر چکے ہیں اب عوام کے صبر کا پیمانہ لبریز ہوچکا ہے اب حکمرانوں کو گھر جانا ہوگا یا پھر اپنا قبلہ درست کرنا ہوگا انھوں نے کہا کہ عوام کو انصاف دلانے کے لیے احتجاج کا نیا راستہ متعارف کروائیں گے۔مہنگائی کو ختم کرنے کے لیے صارف عدالتوں کا رخ کیا جائے گا۔ ۔مقررین نے کہا کہ عوام نے پارلیمینٹ کے سامنے قبریں بھی کھودی لیکن انصاف کا بول بالانا ہو سکا۔ گلے میں روٹیاں اور کفن پوش مظاہرے کرنے سے حکمرانوں کی بے حسی نہیں توڑی جا سکتی۔گھیراؤ جلاؤ اور سڑکیں بند کرنے سے الٹا مہنگائی کے ہاتھوں تنگ، غریب عوم کے لیے مشکلیں کھڑی ہوتی ہیں۔پاکستان فلاح پارٹی نے عوام کے حقوق کے حصول کے لیے عدالتوں کا دروازہ کھٹکھٹانے کا اصولی فیصلہ کر لیا ہے۔ اس سلسلہ میں ڈور ٹو ڈورمہم کے ذریعے عوام میں صارف عدالت کی اہمیت اجاگر کی جائے گی۔ اس موقع پر مظاہرین نے ضلعی انتظامیہ کو ایک ہفتہ کی مہلت دی کہ وہ ریٹ لسٹ کے مطابق اشیائے خور ونوش کی قیمتوں پر کنٹرول کرے۔بصورت دیگر عدالت میں پرائس کنٹرول کمیٹیاں ختم کرنے کی درخواست دی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ عوام سیاستدانوں سے مایوس ہو چکے ہیں۔مہنگائی کے خاتمہ کے لیے ڈپٹی کمشنز اور ضلعی انتظامیہ فعال کردار ادا کرے۔مہنگائی کے معاملے میں حکومت کے ساتھ پی ڈی ایم جماعتوں کی زبانیں گنگ ہو چکی ہیں۔عمران خان کی ٹائیگر فورس اور مولانا فضل الرحمن کی انصار الاسلام میں کوئی فرق نہیں،دونوں بے اختیار ہونے کے باجود اپنی بھرتی پر خوش ہیں۔اوگرا جب چاہتا ہے پٹرول کی قیمتیں بڑھا دیتا ہے۔آئی ایم ایف کی ہدایت پر پہلے ہی بجلی اور گیس سو سے دو سو فیصد مہنگی ہو چکی ہے۔ اب آٹا چینی اور اشیائے خورو نوش کی قیمتوں میں سو فیصد اضافہ کر لیا گیا ہے اب دو سو فیصد اضافے کی کوشش کی جا رہی ہے۔پاکستان فلاح پارٹی کے شاہین مہنگائی کے ممولے کو دبوچنے کے لیے میدان عمل میں نکل چکے ہیں،انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ مہنگائی کو ختم کرنے کے لیے اشیاء کی خرید و فروخت پر شرح منافع مقرر کرے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں